Connect with us

اسرائیل کی تباہی میں اتنا وقت باقی ہے

  • دن
  • گھنٹے
  • منٹ
  • سیکنڈز

Palestine

چلی کے صدرکا قابل تحسین موقف، فلسطینیوں کی فتح ،صہیونیوں کو طمانچہ

یک باوقار موقف جو چلی کے لوگوں اور ان کی قیادت کی مستند اقدار کا اظہار کرتا ہے جس میں صدر گیبریل بوریک نے “اسرائیل کی طرف سے فلسطین میں بچوں کے قتل” کی وجہ سے نئے اسرائیلی سفیر گل آرٹزیالی کی اسناد کو قبول کرنے سے انکار کر دیا تھا۔اس کے جواب میں صہیونی ریاست نے چلی کے سفیر کو طلب کرکے اس پر احتجاج کیا اور اپنے سفیر کے ساتھ ہونے والے سلوک کو توہین آمیز قرار دیا۔

اسرائیلی میڈیا نے کہا کہ “سفیر آرٹزیالی نے ایک رسمی طور پر صدر بوریک کو اپنی اسناد پیش کرنی تھیں، لیکن چلی کی حکومت نے انہیں اسرائیل کی طرف سے فلسطینی بچوں کے قتل کی وجہ سے ملاقات منسوخ کرنے کی اطلاع دی۔”

سابق اینٹ ایجنسی نے کہا کہ چلی کے صدر کے فیصلے کا تعلق مغربی کنارے میں قابض فوج کی طرف سے کی گئی جارحیت سے ہے، جس میں ایک بچے کو گولی مار کر شہید کردیا گیا تھا۔

انہوں نے مزید کہا کہ یہ طریقہ کار منسوخ نہیں کیا گیا تھا، بلکہ اسے اگلے اکتوبر کے دوسرے ہفتے تک ملتوی کر دیا گیا تھا لیکن انہوں نے اس بات کو مسترد نہیں کیا کہ اسرائیلی قابض حکومت سفارتی احتجاج درج کرائے گی۔

کمیونسٹ پارٹی کے بوریک جو گزشتہ سال کے آخر میں انتخابات میں کامیابی کے بعد چلی کی تاریخ میں سب سے کم عمر صدر بنے تھے، طویل عرصے سے فلسطین پر اسرائیل کے غاصبانہ قبضے کے ناقد رہے ہیں۔ جب وہ ایک رکن پارلیمنٹ تھےتب انہوں نے مقبوضہ مغربی کنارے، بیت القدس اور اسرائیل کے زیر قبضہ گولان کی پہاڑیوں کی بستیوں سے اسرائیلی سامان کے بائیکاٹ کی تجویز پیش کرنے والے بل کی حمایت کی۔

چلی میں کمیونٹی

اسی تناظر میں مرکزاطلاعات فلسطین نے لاطینی امریکہ میں فلسطینی کمیونٹی کے سربراہ سمعان خوری سے بات کی۔

خوری نے کہا کہ لاطینی امریکا میں فلسطینی کمیونٹی کی تعداد 10 لاکھ فلسطینیوں پر ہے، جن میں سے نصف ملین چلی میں ہیں، جہاں فلسطینی کمیونٹی مشرق وسطیٰ سے باہر فلسطینیوں کا سب سے بڑا اجتماع ہے۔

مرکزاطلاعات کو دیے گئے بیانات میں انہوں نے کہا کہ چلی کے صدر کا نئے اسرائیلی سفیر کے کاغذات کی منظوری سے انکار ایک اعلیٰ موقف ہے، جو چلی میں فلسطینی کمیونٹی کے ثقافتی اور سماجی اتحاد کی وجہ سے اپنی نوعیت کا پہلا قدم ہے۔

خوری نے نشاندہی کی کہ چلی میں فلسطینی بااثر ہو چکے ہیں۔ کیونکہ وہ چلی کے معاشرے کے تمام شعبوں میں سرگرم شریک ہیں اور چلی کے لوگوں سے الگ تھلگ نہیں ہیں۔ یہ کہ چلی کی پارلیمنٹ میں فلسطینی نژاد رکن ہیں۔

انہوں نے واضح کیا کہ چلی کے باشندوں کو مسئلہ فلسطین، فلسطینی علاقوں میں رونما ہونے والے واقعات اور اسرائیلی جرائم کے بارے میں کافی معلومات ہیں اور وہ اسے ایک منصفانہ سیاسی مسئلہ کے طور پر دیکھتے ہیں اور اس کی کوئی مذہبی جہت نہیں ہے۔

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ چلی کے لوگ ہمارے مقصد کے انصاف کو سمجھتے ہیں اور وہ اس کے بارے میں صحیح فیصلے کر سکتے ہیں اور وہ فلسطین کے حالات اور صہیونی لابی کی طرف سے ملک میں رائے عامہ کو متاثر کرنے کی کوششوں سے آگاہ ہیں۔

انہوں نے واضح کیا کہ چلی کے عوام ان کے دائیں اور بائیں، فلسطینی مسائل کے لیے ایک دل رکھتے ہیں، وہ فلسطینی عوام اور اسرائیلی جرائم سے بے پناہ ہمدردی رکھتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ صدر گیبریل بوریک بائیں بازو کے ہیں اور سابق صدر ایک دائیں بازو کے تھے۔ انھوں نے فلسطینی کیمپوں کا دورہ کیا، قابض ریاست کے جرائم اور خلاف ورزیوں سے قریب سے واقف تھے۔ چلی میں دائیں اور بائیں بازو میں کوئی فرق نہیں ہے۔

بائیکاٹ تحریک کا کردار

اس تناظر میں سمعان خوری نے اس بات پر زور دیا کہ لاطینی امریکا اور ریاست چلی میں بی ڈی ایس تحریک کا ایک اہم کردار اور اہم فیصلے ہیں، جیسا کہ چلی کے صدر کی طرف سے فلسطینی بچوں کے قتل کی وجہ سے اسرائیلی سفیر کے کاغذات کو منظور کرنے سے انکار میں ہوا تھا۔

انہوں نے وضاحت کی کہ لاطینی امریکا میں تحریک بہت مضبوط ہے اور وہاں درجنوں کارکن ہیں جو دن رات نماز ادا کرتے ہیں، اور وہ تمام ممالک میں کام کرتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ چلی کے ذرائع ابلاغ کے ذریعے فلسطینی بیانیہ پیش کیا جاتا ہے لیکن صہیونی لابی کچھ جھوٹی اور من گھڑت خبریں نشر کر رہی ہے۔ اس کی اقتصادی طاقت کو دیکھتے ہوئے۔

فلسطینی اتھارٹی اور پی ایل او کے کردار کے بارے میں خوری نے کہا کہ اس کا وہاں ایک محدود کردار ہے، لیکن یہ اس سے کم ہے جس کی ضرورت ہے، اس پر زور دیا گیا ہے یہ فلسطینی عوام کی نمائندگی کا دعویٰ کرتا ہے۔ اس بات کو پہنچانے کے لیے ہر ممکن کوشش کرے گا۔

Click to comment

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Copyright © 2018 PLF Pakistan. Designed & Maintained By: Creative Hub Pakistan